اک پاگل سی لڑکی ہے

اک لڑکی تھی

نازک سی معصوم سی

پھول سی خوشبو سی

خواب کی تعبیر سی

ڈری سی نڈر سی

یقین اس کا ایمان تھا

اعتماد اس کی پہچان تھا

دھوکھے فریب سے ڈرتی تھی

پھر بھی سب کے ساتھ چلتی تھی

بھروسہ سب پہ کرتی تھی

ایسی پاگل لڑکی تھی

عشق تھا اسے رشتوں سے

غیروں سے اپنوں سے

اگر کوئی روٹھ جاتا تھا

مناتی تھی منتوں سے

عجب سے اس کے خواب تھے

وہ پاگل سمجھتی تھی

سب اس کے اپنے ہیں

سب اس پہ مرتے ہیں

سب جاں چھڑکتے ہیں

محبت کے سوالوں کے

ظالم بڑے جواب تھے

وہ بوجھ تھی اپنوں پہ

سب ناتے رشتوں پہ

بہت درد ہوا

دل چور چور ہوا

ہا ئے میرے جو بھروسے تھے

جو مان تھے،جو ارمان تھے

کہاں آ کے ٹوٹے تھے

پاگل سی لڑکی ہار گئ

اپنی جان وار گئ

ساری خواہشیں سارے سپنے

بہت دکھ سے مار گئ

اگر کبھی احساس ہو

کیا تم نے اس سے چھینا تھا

اک بار صدا دینا

ٹوٹے دل کو جوڑ کر

ہر آہ بھلا کر آئے گی

کیونکہ

رشتوں پہ وہ مرتی ہے

اک پاگل سی لڑکی ہے

(ماورا طلحہ )                                                                                                                   

(Visited 180 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *