انٹرٹینمنٹ

پکار کا پہلا سال – محمد بلال افضل

انسان کا دوسرے انسان سے تعلق احساسات سے عبارت ہے. یہ چہرے کے تاثرات سے شروع ہوئی تاریخ جلد ہی مشترکہ زبان پر چلی گئی. انسانیت نے ترقی کی اور اس زبان نے نقش ہوکر الفاظ بنا دیے. اور یوں

سب سے زیادہ 18مطلوب دہشت گردوں کا تعلق لاہور سے ہے، ریڈ بک

محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) پنجاب کی طرف سے جاری انتہائی مطلوب دہشت گردوں کی تفصیلات پر مبنی ریڈ بک میں انکشاف ہوا ہے کہ سب سے زیادہ مطلوب 18 دہشت گردوں کا تعلق صوبائی دارالحکومت لاہور سے

’’شہید مرتا نہیں‘‘

کراچی: یوم پاکستان کے موقع پر شہدا سمیت قومی ہیروز کوخراج عقیدت پیش کرنے کے لیے ملک کے مقبول سینئر اداکار ومصنف انور مقصود اور آئی کیو جینیئس میڈیا پروڈکشنزنے ترانہ شہدا ’’شہید مرتا نہیں ‘‘ ریلیز کر دیا گیا۔

پھ سے پھٹیچر۔۔۔

لفظ پھٹیچر کی ابتدا کس دور میں ہوئی ساری رات یہ سوچتے گزر گئی ،انکل گوگل بھی پھٹیچر کا ترجمہ کرنے میں ناکام نظر آئے اور آفتاب اقبال کی زبانی پتا چلا فرہنگ آصفیہ میں پھٹیچر نام کا کوئی لفظ

وہ تیری یاد تھی، اب یاد آیا

بچپن میں جب صرف پی ٹی وی ہی تفریح کا واحد ذریعہ ہوا کرتا تھا تو ملکہ ترنم نور جہاں کی طلسماتی اور جذبات میں اتار چڑھاؤ پیدا کرتی مہکتی آواز میں جب بھی یہ غزل سنتے تھے: دل دھڑکنے

پاکستان کی مشہور اور انٹر نیشنل نعت خوان زرمینہ ناصر کی پکار نیوز سے خصوصی گفتگو

پاکستان کی مشہور اور انٹر نیشنل نعت خوان زرمینہ کی پکار نیوز سے خصوصی گفتگوان کا کہنا تھا کہ میری عمر صرف 18سال ہے اور میں 10سال کی عمر میں نعت پڑھنے سے وابستہ ہوں میں نے 10 سال کی

(ضرورت نمائندگان (پکار نیوز کو ملک بھر سے نمائندگان درکار ہیں

یومِ یکجہتئ کشمیر کے تقاضے

بلاشبہ5فروری کو یوم یکجہتی کشمیر پاکستان ہی میں نہیں بلکہ عالم اسلام کے بیشتر ممالک میں انتہائی اہتمام سے منایا جاتا ہے اس روز جلسے جلوس سیمینارزکا انعقاد ہوتا ہے میلوں لمبی انسانی زنجیر بنائی جاتی ہے بھارتی بر بریت

مظلوم مسلمانوں کی مدد اور پاکستانی فلاحی تنظیمیں

تحریر:محمد عبداللہ،حیدرآباد طارق اسماعیل ساگر ہمارے لیے بڑے ہی محترم ہیں۔ ہم بچپن سے ہی ان کی تحریریں پڑھتے آئے ہیں ۔ ان کی تحاریر اور کتابیں پڑھ کر پاکستان کے لیے کچھ کرنے کا جزبہ اور اور تحریک ملتی

کشمیر اور بھارتی ہٹ دھرمی

انشا ء ملک کشمیر کی بیٹی ، ہمیشہ کے لیے اپنی بینائی کھو دینے والی بچی ۔۔۔! قصور فقط اتنا تھا کہ بالکونی سے سر نکال کر اپنے ابا کو دیکھنے کی کوشش کر رہی تھی کہ وہ مسجد سے