کرائسٹ چرچ حملے سے 9 منٹ پہلے انٹیلی جنس کو اطلاع ملی تھی:وزیراعظم نیوزی لینڈ

ویلنگٹن:نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا آرڈرن نے کہا ہے کہ کرائسٹ چرچ حملے سے 9 منٹ پہلے انٹیلی جنس کو اطلاع ملی تھی، جب تک ملزم کے ساتھیوں کا پتہ نہیں چلتا تحقیقات نہیں روکیں گے ۔

تفصیلات کے مطابق نیوز کانفرنس کرتے ہوئے جیسنڈا آرڈرن نے کہا کہ لاپتہ افراد اور زخمیوں کی شناخت کا عمل جاری ہے ،ورثاءکو بدھ تک ان کے پیاروں کی لاشیں دے دی جائیں گی جبکہ شہید ہونے والوں میں معصوم بچے بھی شامل ہیں ۔نیوزی لینڈ کی وزیراعظم نے کہا کہ کرائسٹ چرچ حملے سے 9منٹ پہلے انٹیلی جنس کو اطلاع ملی تھی ،پولیس کی جانب سے حملہ روکنے سے پہلے ہی حملہ آور مساجد میں پہنچ چکا تھا ۔

TRT World Now

@TRTWorldNow

UPDATE: Facebook says it globally removed 1.5 million videos of the in the first 24 hours of the massacre and that it is also removing edited versions of the video that do not show graphic content

TRT World Now

@TRTWorldNow

New Zealand Prime Minister Jacinda Ardern says the killed 50 people and another 34 remain hospitalised, 12 of whom are in critical condition

Embedded video

29 people are talking about this

جیسنڈا اآرڈرن کا کہنا تھا کہ برینٹن کے علاوہ بھی2 لوگ زیرحراست ہیں ،جب تک ملزم کے ساتھیوں کا پتہ نہیں چلتا تحقیقات نہیں روکیں گے ،اسلحہ قوانین میں تبدیلی کیلئے کابینہ اجلاس کل ہوگا۔جیسنڈا آرڈرن نے مسلم ممالک کی جانب سے یکجہتی کے اظہار کو بھی سراہا ۔ نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم نے مسجد النور کا دورہ کیا اور مسلمانوں سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے مسجد میں پھول رکھے اس کے علاوہ انہوں نے متاثرین سے ملاقات بھی کی۔

واضح رہے کہ 15 مارچ کو نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی دومساجد میں سفید فام عیسائی دہشتگرد نے فائرنگ کرتے ہوئے نماز جمعہ کے دوران 49 معصوم مسلمانوں کو شہید اور 40 سے زائد کو زخمی کردیاتھا۔شہدا میں 9پاکستانی بھی شامل ہیں۔خیال رہے کہ کرائسٹ چرچ حملہ، شوٹر نے دس منٹ قبل نیوزی لینڈ کی وزیراعظم کو ای میل کی اور اپنے منشور سے آگاہ کیا ۔

وزیراعظم ہاﺅس نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ دہشت گرد نے حملے سے متعلق بنائے گئے منشور کو جیسنڈا آرڈرن کو ای میل کی تھی۔ای میل میں وزیراعظم، قومی اور بین الاقوامی میڈیا اور سیاست دانوں سمیت 70 افراد کو بھی ٹیگ کیا گیا۔ای میل میں حملے کی وجوہات کا بتایا گیا لیکن حملہ آور نے یہ واضح نہیں کیا کہ وہ یہ حملہ کب کرنے جارہا ہے۔ ای میل کو تحقیقات کے لیے نیوزی لینڈ کی پولیس کے حوالے کردیا گیا ہے۔

(Visited 6 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *