میں کملی جوگن ہو جاؤں شاعرہ: ثناء خان تنولی

میں کملی جوگن ہو جاؤں
لوں عشق کے گھنگھرو پہن پیا

تیرا دن چڑھے میرا دن نکھرے
لوں تعویز ایسا باندھ پیا

تیری آااہ نکلے، میرا دَم نکلے
لوں دل سے دل کو جوڑ پیا

تیری مہک اُترے گُلاب بن کر
لوں خوشبو اُس کی اوڑھ پیا

تری باتوں کی مِٹھاس ایسی
لوں پی اُن کو گھول پیا

ترےعشق میں جو نا رنگ پاؤں
لوں دل کو خود ہی توڑ پیا

سمت کسی اور نجو آنکھ اُٹھے
لوں آنکھیں اپنی پھوڑ پیا

تری گلیوں کی میں خاک بنوں
لوں ہستی اپنی رول پیا….!

(Visited 7 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *